Allama Iqbal Poetry

Sir Allama Iqbal

Sir Allama Iqbal was a multi dimensional personality. He was a poet, a barrister, a politician and a philosopher. He was the one who first conceived Pakistan in his famous Allahabad address. Allama Iqbal is the national poet of Pakistan. Allama Iqbal Poetry is a beautiful addition to Urdu poetry. But he is not only respected in Pakistan but in Iran and India as well. Allama Iqbal was born in Sialkot in 1877. He graduated from GC University. He got his bachelors in Arts degree from University of Cambridge. Allama Iqbal moved to Germany in 1907 for his PhD. He earned his PhD from University of Munich.

Allama Iqbal started writing poetry in Persian during his stay in Europe. Iqbal had great interest in Sufi-ism as evident from his poetry. Iqbal worked as advocate at Lahore High Court. Iqbal was granted pension by Nawab of Bhopal. He passed away in 1938. His tomb is at Hazuri Bagh near Badshahi Mosque Lahore. Allama Iqbal was Ideological founder of Pakistan. To honor his contributions several institutions and places are named after him. These are Allama Iqbal Open University Islamabad, Allama Iqbal International Airport Lahore, Allama Iqbal Town Lahore, Gulshan-e-Iqbal Town Karachi. A street in Germany is also named after him as shown in figure:

Allama Iqbal Street

Enough of introduction. Allama Iqbal poetry is very beautiful and selection is extremely difficult. Nonetheless we have tried to present some exceptional Allama Iqbal Poetry here.

Allama Iqbal Poetry

allama iqbal poetry

ستاروں سے آگے  جہاں  اور بھی ہیں
ابھی  عشق  کے  امتحاں  اور بھی ہیں
تہی  زندگی   سے   نہیں   یہ   فضائیں
یہاں  سینکڑوں  کارواں  اور  بھی ہیں
قناعت   نہ   کر   عالم   رنگ و  بو پر
چمن اور  بھی ہیں،آشیاں اور بھی ہیں
اگر  کھو   گیا  اک  نشیمن  تو  کیا  غم
مقامات   آہ   و  فغاں   اور   بھی   ہیں
تو  شاہیں   ہے ،  پرواز  ہے  کام  ترا
ترے  سامنے  آسماں  اور   بھی   ہیں
اسی روز و شب میں الجھ کر نہ رہ جا
کہ  تیرے  زمان  ومکاں  اور بھی ہیں
گئے دن کہ  تنہا  تھا  میں  انجمن میں
یہاں  اب  مرے  رازداں  اور  بھی ہیں

_______________________________

خرد کے پاس خبر  کے  سوا  کچھ  اور  نہیں
ترا  علاج   نظر   کے   سوا   کچھ  اور  نہیں
ہر   اک   مقام   سے   آگے   مقام   ہے  تیرا
حیات  زوق   سفر  کے  سوا  کچھ  اور  نہیں
گراں بہا  ہے  تو  حفظ  خودی سے ہے ورنہ
گہری میں آب گہر  کے  سوا  کچھ  اور  نہیں
رگوں میں گردش خوں ہےاگر تو  کیا  حاصل
حیات  سوز  جگر  کے  سوا  کچھ  اور  نہیں
عروس  لالہ مناسب نہیں ہےمجھ سے حجاب
کہ  میں  نسیم  سحر  کے  سوا کچھ اور نہیں
جسے  کساد  سمجھتے   ہیں  تاجران  فرنگ
وہ شئے متاع  ہنر  کے  سوا  کچھ  اور  نہیں
!بڑا    کریم    ہے    اقبال    بے    نوا   لیکن
عطائے شعلہ  شرر  کے  سوا  کچھ  اور  نہیں

____________________________________

اللہ  سے  کرے  دور  تو  تعلیم   بھی  فتنہ
املاک  بھی   اولاد  بھی  جاگیر  بھی  فتنہ
نا حق کے لئے اٹھے تو شمشیر بھی فتنہ
شمشیر  ہی  کیا  نعرہ   تکبیر   بھی   فتنہ

___________________________________

پرواز  ہے  دونوں  کی اسی ایک فضا میں
کرگس کا جہاں اور ہے شاہیں کا جہاں اور

___________________________________

اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی
تو  اگر  میرا  نہیں  بنتا  نہ بن اپنا تو بن

___________________________________

جفا جو عشق میں ہوتی ہے وہ جفا ہی نہیں
ستم  نہ  ہو تو محبت میں کچھ مزا ہی نہیں

___________________________________

جو میں سر بسجدہ ہوا کبھی، تو زمیں سے آنے لگی صدا
ترا  دل  تو  ہے  صنم  آشنا  تجھے  کیا  ملے  گا نماز میں

___________________________________

Allama Iqbal poetry encourages people to act rather than rely on destiny only.

پتہ نہیں کیا نام ہے اس کا، خدا فریبی کہ خود فریبی
عمل  سے  فارغ  ہوا  مسلماں  بنا کے تقدیر کا بہانہ

___________________________________

Allama Iqbal poetry brings hope to people.

نہیں ہے نا امید اقبال اپنی کشت ویراں سے
ذرا  نم  ہو تو یہ مٹی بڑی زرخیز ہے ساقی

___________________________________

اپنے بھی خفا مجھ سے ہیں، بیگانے بھی نا خوش
میں  زہر  ہلاہل  کو   کبھی   کہہ    نہ    سکا    قند

___________________________________

عمل  سے  زند گی  بنتی  ہے جنت بھی  جہنم بھی
یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

___________________________________

Allama Iqbal poetry is incomplete without Shikwa and Jawab-e-Shikwa. Few lines are included here.

صفحہ  دہر  سے  باطل   کو   مٹایا   ہم  نے
نوع انسانی  و  غلامی  سے  چھڑایا ہم نے
ترے  کعبے  کو  جبینوں  سے سجایا ہم نے
ترے  قران  کو  سینوں  سے  لگایا  ہم  نے
پھر بھی ہم سے یہ گلہ ہے کہ وفا دار نہیں
ہم  وفا دار  نہیں ،  تو  بھی  تو  دلدار نہیں

___________________________________

صفحہ  دہر  سے  باطل  کو  مٹایا  کس  نے؟
نوع انسانی کو غلامی سے چھڑایا کس نے؟
مرے کعبے کو جبینوں سے سجایا کس نے؟
مرے قران کو سینوں  سے  لگایا  کس نے؟
تھے تو آباء وہ تمہارے ہی مگر  تم  کیا  ہو
ہاتھ    پہ    ہاتھ   دھرے   منتظر   فردا   ہو

___________________________________

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/10 (0 votes cast)
VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0 (from 0 votes)

Add a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *