heart touching poetry

Poetry

Poetry is a literary form of expression of ideas and feelings. Poetry generally uses metre and rythem in expression. Poetry is a popular form of literature. Poetry often uses symbolism and metaphors which can be interpreted in many ways. Often people use poetry to describe their situations. It is said that Music is food for soul. Synchronization of music with poetry has created many beautiful songs. In popularity of most songs, poetry has played a major role. People often recite lyrics of songs with themselves. Lyrics of Urdu and Hindi songs are sometimes taken from famous poets. Especially Ghazal is a famous form of music in Urdu and Hindi. Heart touching poetry have made many ghazals famous. Although heart touching poetry is a relative term. If you are sad, sad poetry is heart touching for you. If you are in love, romantic poetry is heart touching for you.

We have collected some heart touching poetry from various poets. We hope you would like them.

heart touching poetry

Heart Touching Poetry

Munir Niazi is a legendary poet. We will start with his heart touching poetry:

ہمیشہ   دیر  کر  دیتا  ہوں  ہر  کام  کرنے  میں
ضروری  بات  کرنی  ہو، کوئ وعدہ  نبھانا  ہو
اسے آواز  دینی   ہو   اسے   واپس   بلانا   ہو
ہمیشہ        دیر      کر      دیتا      ہوں     میں
مدد کرنی ہو اس کی، یار کی ڈھارس  بندھانا ہو
بہت دیرینہ رستوں پر کسی سے ملنے  جانا  ہو
ہمیشہ        دیر      کر      دیتا      ہوں      میں
بدلتے  موسموں  کی  سیر  میں  دل کو لگانا ہو
کسی  کو  یاد  رکھنا  ہو ، کسی کو بھول جانا ہو
ہمیشہ       دیر       کر      دیتا      ہوں      میں
کسی کو موت سے پہلے، کسی غم سے بچانا ہو
حقیقت اور  تھی  کچھ  اس کو جا کے یہ بتانا ہو
ہمیشہ   دیر   کر  دیتا  ہوں  ہر  کام  کرنے  میں

Ahmed Faraz is still alive in our hearts through his heart touching poetry:

جو   چل   سکو   تو   کوئ  ایسی  چال  چل  جانا
مجھے   گماں   بھی   نہ   ہو   اور   تم   بدل جانا
یہ  شعلگی   ہو   بدن   کی   تو   کیا   کیا   جائے
سو   لازمی   تھا   ترے   پیرہن   کا    جل    جانا
تمہیں    کرو    کوئ    درماں  ،  یہ  وقت  آپہنچا
کہ  اب  تو  چارہ  گروں  کو  بھی  ہاتھ   مل  جانا
ابھی   ابھی   تو   جدائ   کی    شام    آئ    تھی
ہمیں    عجیب    لگا    زندگی    کا    ڈھل    جانا
سجی    سجائ    ہوئ   موت   زندگی   تو   نہیں
مورخوں   نے   مقابر    کو    بھی    محل    جانا
یہ کیا کہ تو  بھی  اسی  ساععت  زوال  میں  ہے
کہ  جس  طرح  ہے سبھی سورجوں کو ڈھل جانا
ہر ایک عشق کے بعد اور اس کے عشق کے بعد
فراز   اتنا   بھی   آساں   نہ   تھا   سنبھل    جانا

Heart touching poetry is incomplete without poetry of Parveen Shakir:

اب  بھلا  چھوڑ  کہ  گھر کیا کرتے
شام کے   وقت   سفر   کیا   کرتے
تیری   مصروفتیں    جانتے    ہیں
اپنے  آنے  کی   خبر   کیا   کرتے
جب   ستارے   ہی  نہیں   مل پائے
لے کے ہم شمس و  قمر کیا کرتے
وہ مسافر ہی  کھلی  دھوپ  کا  تھا
سائے پھیلا کے  شجر  کیا   کرتے
خاک    ہی   اول   و   آخر   ٹھہری
کر  کے  زرے  کو  گہر  کیا  کرتے
رائے   پہلے  سے  بنا  لی  تو  نے
دل  میں اب ہم تیرے گھر کیا کرتے
عشق  نے  سارے  سلیقے  بخشے
حسن   سے   کسب  ہنر  کیا  کرتے

Some beautiful poetry from Jaun Elia:

نیا  اک  رشتہ  پیدا  کیوں  کریں  ہم
بچھڑنا ہے تو جھگڑا کیوں کریں ہم
خموشی  سے  ادا   ہو  رسم  دوری
کوئ  ہنگامہ  برپا  کیوں   کریں  ہم
یہ کافی ہی کہ  ہم  دشمن  نہیں  ہیں
وفا داری  کا  دعوی  کیوں کریں ہم
وفا     اخلاص      قربانی      محبت
اب ان لفظوں کا پیچھا کیوں کریں ہم
ہماری  ہی   تمنا   کیوں    کرو    تم
تمہاری ہی   تمنا   کیوں   کریں   ہم
کیا   تھا   عہد   جب  لمحوں میں ہم
تو  ساری  عمر  ایفا  کیوں کریں ہم
نہیں  دنیا   کو   جب   پروا   ہماری
تو  پھر  دنیا کی پروا کیوں کریں ہم
یہ  بستی  ہے  مسلمانوں  کی بستی
یہاں  کار   مسیحا   کیوں   کریں  ہم

Nasir Kazmi said:

گئے  دنوں   کا   سراغ   لے   کر   کدھر   سے   آیا  کدھر گیا وہ
عجیب   مانوس    اجنبی  تھا   مجھے   تو   حیران   کر   گیا   وہ
بس ایک موتی سی چھب دکھا کربس ایک میٹھی سی دھن سنا کر
ستارہ   شام بن  کے   آیا    برنگ     خواب     سحر     گیا     وہ
خوشی کی رت ہو کہ غم کا  موسم  نظر اسے  ڈھونڈتی  ہے ہر دم
وہ   بوئے   گل    تھا  کہ  نغمہ  جان  مرے  تو دل میں اتر گیا وہ
نہ  اب  وہ  یادوں کا  چڑھتا   دریا  نہ  فرصتوں  کی  اداس  برکھا
یوں ہی  ذرا  سی  کسک  ہے  دل میں جو زخم گہرا تھا بھر گیا وہ
کچھ  اب  سنبھلنے  لگی  ہے  جاں بھی  بدل  چلا دور آسماں بھی
جو رات بھاری  تھی  ٹل  گئی  ہے  جو  دن  کڑا  تھا  گزر  گیا  وہ
بس  ایک  منزل  ہے  بوا لہوس  کی  ہزار  رستے ہیں اہل دل کے
یہی تو فرق ہے مجھ میں  اس  میں  گزر  گیا  میں  ٹھہر  گیا  وہ
شکستہ  پا   راہ  میں   کھڑا   ہوں   گئے   دنوں   کو بلا رہا ہوں
جو    قافلہ    میرا   ہمسفر    تھا    مثال    گرد    سفر    گیا    وہ
مرا  تو  خوں  ہو  گیا  ہے  پانی  ستم  گروں  کی  پلک نہ بھیگی
جو نالہ  اٹھا تھا رات دل  سے  نہ  جانے  کیوں  بے  اثر  گیا  وہ
وہ  مے  کدے  کو  جگانے  والا  وہ  رات  کی  نیند   اڑانے  والا
یہ آج کیا اس کے جی میں  آئ  کہ  شام  ہوتے  ہے  گھر  گیا  وہ
وہ  ہجر  کی  رات   کا   ستارہ   وہ   ہم   نفس   ہم   سخن   ہمارا
سدا  رہے  اس  کا  نام  پیارا  سنا   ہے   کل   رات   مر   گیا   وہ
وہ  جس  کے  شانے  پہ  ہاتھ  رکھ  کر سفر کیا تو نے منزلوں کا
تری  گلی  سے  نہ  جانے  کیوں  آج  سر  جھکائے  گزر  گیا  وہ
وہ رات  کا   بے   نوا   مسافر   وہ   تیرا   شاعر   وہ  تیرا  ناصر
تری  گلی  تک  تو  ہم  نے  دیکھا  پھر  نہ  جانے  کدھر   گیا  وہ

Habib Jalib needs no introduction. We will conclude this article with his heart touching poetry:

تم سے پہلے جو  اک  شخص  یہاں  تخت  نشیں  تھا
اس   کو   بھی  اپنے  خدا  ہونے  پہ اتنا ہی یقیں تھا
کوئ  ٹھہرا  ہو   جو   لوگوں   کے   مقابل   تو  بتاو
وہ  کہاں   ہیں  کہ  جنہیں  ناز  بہت  اپنے  تئیں  تھا
آج   سوئے    ہیں    تہ    خاک    نہ    جانے   کتنے
کوئ  شعلہ   کوئ   شبنم   کوئ   مہتاب   جبیں   تھا
اب  وہ  پھرتے  ہیں  اسی  شہر  میں تنہا لئے دل کو
اک  زمانے  میں   مزاج ان  کا  سر  عرش  بریں تھا
چھوڑنا  گھر کا  ہمیں  یاد  ہے  جالب   نہیں  بھولے
تھا وطن اپنے زہن میں اپنے کوئ زنداں تو نہیں تھا

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/10 (0 votes cast)
VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0 (from 0 votes)

Add a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *